لاک ڈاؤن، مقبوضہ کشمیر کے ساڑھے13لاکھ دیہاڑی دار مزدور فاقہ کشی کا شکار

سری نگر: مقبوضہ کشمیر میں مسلسل لاک ڈاون اور اب کرونا کرفیو کے باعث ساڑھے13لاکھ دیہاڑی دار مزدور فاقہ کشی کا شکار ہوگئے ہیں۔

لاک ڈائون نے غریب دھیاڑی داروں کی پریشانی میں اضافہ کر دیا ہے۔ ایک سروے کے مطابق جموں وکشمیر میں ساڑھے13لاکھ افراد یومیہ اجرت پر کام کرتے ہیں۔سرینگر کی ایک فلاحی تنظیم نے ابتک قریب 70مزدوروں کی مالی مدد کی ہے۔ایک اور فلاحی تنظیم نے کہا کہ وہ ابھی تک 200کنبوں کی مالی معاونت کرچکے ہیں۔

وادی میں سینکڑوں کی تعداد میں مقامی سطح پربیت المال کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔ 2019میں انہی بیت المال سے سینکڑوں لوگوں کو بھر پور مالی معاونت فراہم کی گئی۔ پچھلے سال بھی مقامی مساجد کمیٹیوں اور قائم کئے گئے بیت المال کی جانب سے مالی مدد فراہم کی گئی ہے۔

مسلم وقف بورڈ کی جانب سے بھی اس طرح کی مالی امداد فراہم کی جارہی ہے۔وقف بورڈ کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر مفتی فرید نے  بتایا کہ انکے پاس 600کنبے رجسٹر ہیں۔

Recommended For You

About the Author: admin