سری نگر کی بارہ لاکھ آبادی کو پھر سے محصور کرنے کا منصوبہ

 سری نگر: بھارتی حکومت نے مقبوضہ کشمیر کے دارلحکومت سری نگر کی  بارہ لاکھ آبادی کو پھر سے محصور کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ انسپکٹر جنرل پولیس کشمیر زون وجے کمار نے اعلان کیا ہے کہ سرینگر کے تمام داخلی و خارجی راستوں پر اضافی فورسز نفری تعینات ہوگی  جبکہ  سری نگر میں چوبیس گھنٹوں کے ناکوں، ہمہ وقت چوکیوں، ہجوم والے علاقوں میں اچانک اور محدود محاصروں و تلاشیوں کا سلسلہ جاری رہے گا، داخلی و خارجی راستوں پر شہریوں کی نقل و حرکت کی جانچ پڑتال اور ڈرون کے ذریعے نگرانی کی. جائے گی ۔

آئی جی پی کشمیر نے افسران کو ہدایت کی کہ وہ اپنے اپنے علاقوں میں نگرانی میں اضافہ کریں،اور آپریشن کریں ۔ بھارتی اخبار کے  مطابق سرینگر شہر میں نئی منصوبہ سازی کے تحت اب شہر اور اس کے تمام داخلی راستوں پر سیکورٹی بڑھا دی ہے اور اہلکاروں کو چوکس رہنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔ پولیس، سی آر پی ایف اور دیگر نیم فوجی دستوں کے اعلی افسران نے سرینگر پولیس کنٹرول روم میں میٹنگ  میں نئی منصوبہ بندی کی ہے ۔اس میٹنگ کی صدارت انسپکٹر جنرل پولیس کشمیر زون وجے کمار نے کی اور انکے ہمراہ آئی جی سی آر پی ایف کشمیر آپریشنز محترمہ چارو سنہا، ڈی آئی جی وسطی کشمیر امت کمار، ڈی آئی جی سی آر پی ایف شمالی سرینگر، ڈی آئی جی سی آر پی ایف جنوبی سری نگر، ڈی آئی جی ایس ایس بی کے علاوہ ضلع سرینگر کے تمام زونل ایس ایس پیز اور سرینگر میں تعینات سی آرپی ایف اور ایس ایس بی کے تمام کمانڈنٹوں نے شرکت کی۔ ، آئی جی پی کشمیر وجے کمار نے  کہا کہ سرینگر شہر میں  تمام اہم اداروں اور مقامات کی سیکورٹی نگرانی کو بڑھانا انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔

مزید پڑھیں: کشمیری پاکستان کی سلامتی بقا،استحکام کی جنگ لڑرہے ہیں،عبدالرشید ترابی

انہوں نیسرینگر شہر میں انہوں نے اہم اور حساس مقامات پر چوبیس گھنٹوں کے ناکوں، ہمہ وقت چوکیوں، ہجوم والے علاقوں میں اچانک اور محدود محاصروں و تلاشیوں، داخلی و خارجی راستوں پر نگاہ رکھنے کے علاوہ مشتبہ افراد کی نقل و حرکت کی جانچ پڑتال اور ڈرون کے ذریعے نگرانی کی اہمیت پر بھی روشنی ڈالی۔

Recommended For You

About the Author: admin